9

قوم کو پراپرٹی کے کاروبار کی طرف مائل کرنے والے لوگ اس قوم کے مجرم ہیں

قوم کو پراپرٹی کے کاروبار کی طرف مائل کرنے والے لوگ اس قوم کے مجرم ہیں ۔ لوگ نئی فیکٹری لگانے کی بجائے اپنا سرمایہ کسی نئی رہائشی سکیم میں لگا کر آسان کمائی کے چکروں میں پڑ گئے ہیں ۔ یہ نت نئی رہائشی سکیمیں اس قوم کو ایک بدترین غذائی بحران کی طرف دھکیل رہی ہیں ۔

یہودیوں کےمعروف ترین بین الاقوامی میگزین “دی اکنامسٹ” کا شمارہ آنے والے بدترین قحط کی پیشن گوئی کر رہا ہے۔ اس میگزین کے سرورق پر گندم کے خوشوں میں گندم کے دانوں کی جگہ بھوک سے متوقع طور پر مرنے والے انسانوں کی کھوپڑیوں کو دکھایا گیا ہے۔

zoom کرکے تصویر کو بڑا کریں اور دیکھیں۔ پاکستان اس وقت ان زرعی ممالک میں سر فہرست ہے جہاں زرعی زمین تیزی سے رہائشی کالونیوں میں تبدیل ہو رہی ہے صرف لاہور کے اردگرد گذشتہ 5 سالوں میں دو لاکھ ٹن گندم پیدا کرنے والا زرعی رقبہ رہائشی کالونیوں کا حصہ بن گیا ہے۔

خدا کو مانیں اپنے آپ پر رحم کرین ان پلاٹون کے چکروں سے نکلین اور پاکستان میں ایک مرتبہ پھر اجناس کے پودے لگانے کی ضرورت ہے پھل دار درخت اور اجناس کے پودے ہی ہماری بقاء ہیں اس پر بطور قوم ہمیں توجہ دینا ہو گی۔

ورنہ پاکستان کی جو صورتحال اس وقت ہے وہ بہت خطرناک حد تک پہنچ چکی ہے اور زرعی ملک ہونے کے باوجود ہر دوسری چیز کے لئے ہم پڑوسی ملکوں پر انحصار کر رہے ہیں۔

آخر کب تک ؟لگتاہے بہت جلد ہم غذائی بحران کا شکارہونیوالے ہیں ڈرواس وقت سےجب روپے ہونے کے باوجودبھی کھانے کو کچھ نہیں ملے گا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں