9

مانسہرہ کے چپے چپے پر پراٸیویٹ کلینکس کی بھرمار

مانسہرہ ۔ محکمہ صحت کی ملی بھگت سے مانسہرہ کے چپے چپے پر پراٸیویٹ کلینکس کی بھرمار۔ غریب عوام کی چمڑی ادھیڑنے کے مراکز کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ مانسہرہ کے عوام کیلیے ایک عذاب کی صورت اختیار کرتا جارہا ہے۔

ضلع میں قاٸم قصاب خانون کے مقابلے میں چوگنی تعداد کا درجہ حاصل کرنے والے نام نہاد شفاخانوں نے قصاٸیت کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے۔ان کلینکس پر جس بیدردی اور بے حسی کیساتھ غریب عوام کا خون نچوڑا جاتا ہے اسکی جتنی بھی مذمت کی جاۓ کم ہے۔

اس کار خیر میں محکمہ صحت کو مرکزی کردار کا درجہ حاصل ہے۔ محکمہ صحت کی ملی بھگت کے نتیجے میں کلینک مالکان کو کھلی چھوٹ حاصل ہے اور چیک اینڈ بیلنس کا فقدان سر چڑھ کر اپنے کمالات دکھا رہا ہے۔

ایک طرف کلینکس سے متاثر ہونے ہونے والے مریضوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ دیکھنے کو مل رہا ہے جبکہ دوسری طرف ضلع بھر میں دو نمبر ادویات ریوڑی مونگ پھلی کیطرح سرعام اور سربازار ڈنکے کی چوٹ پر فروخت ہورہی ہیں۔کسی کی مجال نہیں کہ معاشرے کے ان ناسوروں کے خلاف کوٸی کارواٸی عمل میں لا سکے۔

ڈرگ اتھارٹی بھی اپنے بڑوں کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ یہی وجہ ہیکہ ضلع مانسہرہ کے غریب عوام کا بلڈ پریشر دن بہ دن شدت اختیار کرتا جارہا ہے اور بڑھتا ہوا خونی دباٶ کسی بھی وقت خطرناک صورت اختیار کر سکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں