7

سال 2022 کا سورج تلخ یادوں کیساتھ غروب ہوگیا

مانسہرہ (عبدالواحد خان سے)سال 2022 کا سورج تلخ یادوں کیساتھ غروب ہوگیا۔ملک کے دیگر شہروں کیطرح ہزارہ کے مکینوں نے بھی بوجھل دل کیساتھ بوجھل سال کو رخصت کیا۔

ملکی تاریخ کے گذشتہ برسوں کی نسبت 2022 کا سال پوری قوم کیلیے عذاب اور آزماٸش کا سال ثابت ہوا۔مہنگاٸی کے سونامی نے عام آدمی کیلیے عذاب کے سامان پیدا کٸے۔

ملکی تاریخ کی بدترین مہنگاٸی نے جہاں ایک طرف پوری قوم کے چودہ طبق روشن کیے وہاں دوسری طرف سیاسی رسہ کشی۔ پکڑا پکڑاٸی اور لیکس در لیکس کی سیاست نے قوم کو ہیجانی کیفیت سے آذاد نہیں ہونے دیا۔اقتدار کے پجاریوں نے قوم کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کیلیے اپنی تمام تر صلاحیتوں کے جوہر دکھاۓ۔

وعدوں اور دلاسوں کے چورن سے درماندہ قوم کا پیٹ بھرنے کی بھونڈی کوشش کے سابقہ تمام تر ریکارڈ توڑے گۓ۔عوامی غمخواری کے بھاشن دیکر قوم کو بیوقوف بنانے کے تمام تر نسخے استعمال میں لاۓ گۓ۔قوم کی حالت زار سے بے نیاز ہوکر اقتدار کے جھولوں کا مزا لینے والے سیاسی فنکاروں کے خلاف قوم کا غم غصہ آخری حدود کو تجاوز کرتے ہوۓ دیکھا گیا۔

گالم گلوچ کی سیاست اور غیر پارلیمانی روایات کو عروج پاتے ہوۓ دیکھا گیا۔زمانہ بدل گیا۔زمانے کے طور طریقے بدل گۓ۔سیاسی غمخواروں کے حالات بدل گۓ مگر قوم کی حالت نہ بدل سکی۔

سیاست کی منڈی کے بہاٶ تاٶ اور لکی سیاسی سرکس کو قوم نے اپنی کھلی آنکھوں سے دیکھا اور گزرے سال کو ستمگر قرار دیتے ہوۓ آنیوالے سال سے نٸی امیدیں قاٸم کر لی ہیں ۔گذشتہ برسوں کی نسبت سال 2022 قوم کیلیے انتہاٸی بھاری اور تکلیف دہ ثابت ہوا۔آزماٸشوں میں گھری ہوٸی قوم کو ملک کے بدترین سیلاب کا عذاب بھی برداشت کرنا پڑا۔

سیلاب کے نتیجے میں ہزارہ کی سیاحت کو ناقابل تلافی نقصان سے دوچار ہونا پڑا۔سال 2022 کا سورج غروب ہوچکا ہے لیکن اسکی تلخ یادیں اور ناقابل یقین حقیقتیں طویل عرصے تک زندہ وتابندہ رہینگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں