30

ضلع ایبٹ آباد پاکستان کا ایک اہم ترین شہر

ایبٹ آباد:۔ خیبر پختونخواہ کاضلع ایبٹ آباد پاکستان کا ایک اہم ترین شہر ہے۔سطع سمندر سے اسکی کی بلندی 4120 فٹ ہے پاکستان کے دارالخلافہ اسلام آباد سے تقریباً101 کلومیٹر کے فاصلےپر ایبٹ آباد ایک پر فضا مقام ہے۔

1998کی مردم شماری کے مطابق اس شہر کی آبادی 8,81000 افراد پر مشتمل ہےاور 94 فیصدافراد کی مادری زبان ہندکو ہے۔ایبٹ آباد کواللہ تعالی نے قدرتی حسن سے نوازہ ہےاس کے خوبصورت پہاڑ اور ان پہ سرسبزشاداب سبزا اس کے قدرتی حسن کو اور بھی دوبالا کرتا ہے.

ایبٹ آباد اپنے پر فضا مقامات کی وجہ سے پورے پاکستان میں مشہور ہے اہم سیر و تفریحی کے مقامات میں شملہ پہاڑی،ٹھنڈیانی، ڈگری بنگلہ میرنجانی ،ہرنو، نتھیاگلی ،ایوبیہ شامل ہیں ان مقامات پر گرمیوں میں موسم خوشگوار رہتا ہے اور سردیوں میں انتہائی ٹھنڈا موسم ہوتا ہے۔ گرمیوں اور سردیوں میں پورے پاکستان سےلوگ ایبٹ آباد شہر کے پر فضا مقامات کا رخ کرتے ہیں۔

سیاحوں کے لئے ایبٹ آباد کا بلند ترین مقام میرنجانی ڈگری بنگلہ بھی ہے جس کی خوبصورتی اپنی مثال آپ ہے جنت نظیر وادی میں ہر سال لاکھوں سیاح اس وادی کے قدرتی نظارے سے بھرپور لطف اندوز ہوتے ہیں.

جیمز ایبٹ اور انگریز گورنمنٹ اس وادی کی قدرتی خوبصورتی سے اس قدر متاثر ہوئے کہ آس زمانے میں ایک کچا ٹریک بنایا گیا تھا جو سیاحوں کی آمد کے لئے گھوڑ سواری کا یہ ٹریک آج بھی موجود ہے جو تقریباً چالیس سے پینتالیس کلومیٹر کی ایسی پہاڑی ٹاپ ہے جس کا فورتھ سائیڈ ویو ہے اور یہ اعزاز شاید کسی بھی پہاڑی ٹاپ کو حاصل نہیں۔

میرنجانی ایبٹ آباد کے اس بلند ترین مقام سے ایک ہی وقت میں آزاد کشمیر کی وادیوں اور گلیشیئر تک کے نظاروں سے لطف اندوز ہوا جا سکتا ہے اور دوسری طرف گلیات اور ایبٹ آباد کی دلفریب وادیوں کا نظارہ بھی ہو جاتا ہے.

ضرورت اس امر کی ہے کہ اس جنت نظیر خطے کو سیاحوں کے لئے ڈویلپ کیا جائے اور قدرت کے اس عظیم نعمت سے اس سے استفادہ کیا جائے۔ یہ لاکھوں لوگوں کو روزگار بھی دے سکتا ہے اور ہر سال لاکھوں ملین ڈالر زر مبادلہ کی صورت میں ملکی خزانے میں آ سکتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں