7

شیرگڑھ قلعہ جہاں کبھی ریاست امب کے نوابین رہتے تھے

شیرگڑھ قلعہ جہاں کبھی ریاست امب کے نوابین رہتے تھے

مانسہرہ شہر سے پنتیس کلو میٹر فاصلے پر شیر گڑھ گاؤں کو ہزارہ کی تاریخی ریاست امب کا گرمائی دارالحکومت ہونے کا اعزاز حاصل ہے جہاں کبھی نوابین رہتے تھے جن کی یاد میں تاریخی قلعہ شیرگڑھ اب بھی موجود ہے جو اب بھی ریاست کے نواب خاندان کی رہائش گاہ ہے ۔

ریاست امب ایک شاہی ریاست تھی جو تنولی قبیلے کے سربراہ پائندہ خان تنولی نے مہاراجہ رنجیت سنگھ کے دور میں سکھوں سے مزاحمت کے بعد قائم کی تھی۔ اس ریاست کا مرکزی مقام دربند شہر اور علاؤہ تناول تھا ۔ دربند شہر اب تربیلا ڈیم کے گہرے پانیوں میں سو رہا ہے مگر قلعہ شیر گڑھ اب بھی ریاست امب کی یاد دلاتا ہے جو ریاست کا گرمائی صدر مقام تھا ۔

قلعہ شیر گڑھ 1819 میں ہزارہ میں تعینات سکھ فوج کے کمانڈر دیوان بھوانی داس اور میر سنگھ نے ایک سٹرٹیجک مقام پر تعمیر کروایا تھا ۔ پائندہ خان اور سکھوں کے درمیان اس قلعے کو حاصل کرنے کےلئے سترہ لڑائیاں ہوئیں تھیں۔ پائندہ خان کے پوتے نواب محمد اکرم خان نے 1870 میں قلعہ شیر گڑھ کو حویلی بنا دیا تھا۔

قلعہ شیر گڑھ کے مکین نوابزادہ جہانداد خان تنولی قلعہ شیر گڑھ کی تاریخ ، تنولی ثقافت قیام پاکستان اور تربیلا ڈیم کی تعمیر میں ریاست امب کا فراموش کر دی گئیں قربانیوں پر روشنی ڈالتے ہیں ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں