12

مجھے شہرت کیلئے کسی سیڑھی کی ضرورت نہیں تھی‘، طوبیٰ کی پہلی مرتبہ شادی اور طلاق پر تفصیلی گفتگو

اداکارہ و ماڈل طوبیٰ انوار نے پہلی مرتبہ کم عمری میں شادی اور پھر طلاق پر کُھل کر بات چیت کی ہے۔

حال ہی میں ایک پوڈ کاسٹ میں گفتگو کرتے ہوئے طوبیٰ انوار نے اپنی شادی اور پھر طلاق سے متعلق بات کی۔

انہوں نے بتایا کہ ‘جس وقت میری شادی ہوئی، میں کم عمر تھی، بہت سی چیزوں کا علم نہیں تھا جس کے باعث مجھے مشکلات پیش آئیں’۔

طوبیٰ انوار نے اپنے انٹرویو میں عامر لیاقت حسین کا نام لینے سے گریز کیا اور کہا کہ ‘شادی کا اعلان میں نے نہیں کیا تھا، کسی نے ہماری خبر لیک کی تھی، البتہ شادی خفیہ راز نہیں تھا لیکن ہم انتظار کررہے تھے کہ صحیح وقت آئے تو ہم اعلان کریں، ہم اس کے لیے تیار ہی نہیں تھے کہ کوئی ہم سے پہلے یہ خبر لیک کرے اور پھر لوگوں کا ردعمل جو آیا، ہم اس کے لیے بھی تیار نہیں تھے’۔

انہوں نے کہا کہ ‘مجھے آن لائن ریپ اور قتل کی دھمکیاں دی گئیں، مجھے سمجھ نہیں آرہا تھا کہ میں نے کیا غلط کیا ہے، میرا تعلق ایک اچھے اور پڑھے لکھے خاندان سے ہے، مجھے کوئی ضرورت نہیں کہ کسی کو پیسوں یا شہرت کے لیے سیڑھی بناتی، میرے والد نے مجھے دنیا کی ہر جگہ گھمائی ہے’۔

‘گھر سے باہر نکلی تو پتا چلا کہ میاں بیوی میں جھگڑا بھی ہوتا ہے’

عامر لیاقت کی سابقہ اہلیہ نے کہا کہ ‘ہمارے گھر کا ماحول بہت اچھا تھا، میں نے شروع سے والدین کو دیکھا جو میرے لیے آئیڈیل تھے، ان میں کبھی لڑائی نہیں ہوئی، جب میں گھر سے باہر نکلی اور کچھ فیملیز کو دیکھا تب پتا چلا کہ میاں بیوی میں جھگڑا بھی ہوتا ہے’۔

طوبیٰ نے بتایا کہ ‘مجھے پیسوں کی کبھی کوئی کمی نہیں تھی، گولڈ ڈگر جیسے الزامات کی اس وقت سمجھ آتی جب میں وہاں (مرحوم عامر لیاقت کے گھر) سے کچھ لے کر نکلی ہوتی، لوگ کہتے ہیں پیسوں اور ٹی وی پر آنے کے لیے شادی کی، اس کے لیے شادی کی ضرورت نہیں ہوتی’۔

جب شادی ختم کی تو میں نے وقار اور عزت قائم رکھی: طوبیٰ

اداکارہ نے کہا کہ جب شادی کا تعلق ختم کیا تو پر وقار طریقے سے اسے اختتام تک پہنچایا، میرا ماننا ہے کہ جب آپ کسی کے ساتھ رزق کھاتے ہو،چائے پیتے ہو تو اس کی عزت رکھنی چاہیے، بھلے آپ کے تعلقات اس سے کتنے ہی خراب کیوں نا ہوں، آپ کو عزت رکھنی پڑتی ہے کیونکہ یہ آپ کی شخصیت ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں