18

دہشت گردوں کو بُری طرح شکست دیں گے۔اخترحیات خان

مانسہرہ ۔ انسپکٹر جنرل آف پولیس خیبرپختونخوا اخترحیات خان نے کہا کہ خیبرپختونخوا پولیس فورس کے جوانوں میں دہشتگردوں سے نمٹنے کی صلاحیتیں بدرجہ اتم موجود ہیں جس کے جری جوان پہلے کی طرح اس بار بھی دہشت گردوں کو بُری طرح شکست دیں گے۔

یہ بات انہوں نے گذشتہ روز سنٹرل پولیس آفس پشاور میں صوبہ بھر کے ضلعی پولیس آفسروں کے ساتھ ویڈیو لنک کانفرنس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ ایڈیشنل آئی جی پی آپریشنز اور ڈی آئی جی فنانس بھی اس موقع پر موجود تھے جبکہ تمام ضلعی پولیس افسران اپنے اپنے ضلع سے بذریعہ ویڈیو لنک کانفرنس میں شریک ہوئے۔ پولیس سربراہ نے کہا کہ زمین پر فساد پھیلانے والے انسانیت کے دشمن ہیں.

پولیس فورس کو دہشت گردی کے چلینج کا سامنا ہے اور اعلیٰ پولیس افسران کو ہدایت کی کہ وہ اپنی قائدانہ صلاحیتوں کا بھر پور مظاہرہ کرتے ہوئے فورس کی کمان آگے بڑھ کر کریں اور دہشت گردوں اور جرائم پیشہ افراد کی قانون کے دائرے میں بیخ کنی کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے توقع ظاہر کی کہ خیبرپختونخوا پولیس عوام کی وابستہ توقعات سے بڑھ کر اپنے فرائض انتہائی بہادری، جوانمردی اور پیشہ ورانہ انداز میں سرانجام دے گی۔

آئی جی پی نے کہا کہ اُنہوں نے اپنی دور ملازمت میں خیبرپختونخوا پولیس جیسی بہادر فورس نہیں دیکھی، جس کے سربکف جوانوں نے خودکش حملہ آوروں کو گلے لگایا اور بارود سے بھری گاڑیوں کے سامنے سیسہ پلائی دیوار بنے لیکن ان کو اپنے اہداف تک نہیں پہنچنے دیا اور دھماکوں اور پولیس شہادتوں کی صورت میں پانچ منٹ کے اندر اندر اسی پوائنٹ پر دوسرے پولیس اہلکاروں کو ڈیوٹی پر موجود پایا۔

آئی جی پی نے ضلعی پولیس افسروں کو ہدایت کی کہ وہ مشکل کی اس گھڑی میں مثال بن کر آگے بڑھیں اور فساد پھیلانے والوں کو ایک بار پھر دندان شکن شکست سے دو چار کرکے پولیس فورس کی صلاحیتوں کا لوہا منوائیں۔

آئی جی پی نے کہا کہ خیبر پختونخوا پولیس ایک متحد اور منظم ٹیم ہے۔ جس کی کمان سنبھالنے پر مجھے فخر ہے۔ انہوں نے کہا کہ پولیس فورس کے جوان میرے بچوں کی طرح ہیں جن کی دیکھ بھال اور فلاح و بہبود میری اولین ترجیح ہے۔ آئی جی پی نے واضح کیا کہ خیبر پختونخوا میں تمام فیصلے میرٹ اور بہترین کارکردگی کی بنیاد پر ہوں گے۔ اہل اور پروفیشنل افسروں و جوانوں کو آگے بڑھنے کے بھر پور مواقع دیئے جائیں گے۔

آئی جی پی نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ صوبے سے دہشت گردی اور جرائم کا خاتمہ کرکے دیر پا امن کے قیام اور خوشحال معاشرے کی تشکیل میں کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں